حکومت کا سینیٹ انتخابات میں ہارس ٹریڈنگ کے خاتمے کیلئے اوپن بیلٹ کا فیصلہ
جی 20 سے پاکستان کو قرضوں کی ادائیگی میں 2 ارب ڈالر سے زائد ریلیف ملنے کا امکان
سعودی عرب میں کوڑے مارنے کی سزا کو باضابطہ ختم کردیا گیا
سٹیزن پورٹل سے شہری غیر مطمئن، وزیراعظم کا اداروں کیخلاف تحقیقات کا حکم
کورونا نے پی ٹی آئی کی رکن اسمبلی شاہین رضا کی جان لے لی
ایشیائی ترقیاتی بینک نے پاکستان کو کورونا وباء سے بچاؤ کیلئے 30 کروڑ ڈالر کا قرض فراہم کر دیا
حکومت بلوچستان نے اسمارٹ لاک ڈاؤن میں 2 جون تک توسیع کردی
پاکستان میں 2 ماہ بعد ریلوے آپریشن بحال کر دیا گیا
کرونا وبا،ملک میں 1ہزار سے زائد اموات،مریضو ں کی تعداد47ہزار سے تجاوز کر گئی،13ہزار سے زائدصحتیاب
تازہ تر ین

لبنانی کرنسی لیرہ امریکی ڈالر کے مقابلے میں اپنی کم ترین سطح پرآگئی

بیروت(نیوزڈیسک) لبنان کی سرکاری کرنسی لیرہ امریکی ڈالر کے مقابلے میں اپنی کم ترین سطح پر آگئی۔ یہ گراوٹ لبنانی بنکوں کے لیے کسی بم حملے سے کم ہرگزنہیں۔ کرنسی کے کم ترین سطح پرآنے کے واقعے نے ایک بار پھر لبنان میں 12 جون 2016ء کے واقعے کی یاد تازہ کردی جب باقاعدہ طورپر لبنانی بنکوں کو دھماکوں سے نشانہ بنایا گیا تھا۔ لبنانی کرنسی میں غیرمعمولی اور غیر مسبوق گراوٹ اپنے ساتھ بہت سی ایسی خبریں اور خدشات بھی لائی ہے جس سے یہ اندازہ لگانا مشکل نہیں کہ آنے والے دنوں میں ڈالر کے مقابلے میں لبنانی لیرہ کی قیمت مزید گر سکتی ہے۔میڈیارپورٹس کے مطابق کرنسی میں گراوٹ لبنان کے مرکزی بنک کے گورنر ریاض سلامہ اور حزب اللہ دونوں کے لیے واضح پیغام ہے کہ انہیں منی لانڈرنگ اور دہشت گردی کی مالی اعانت سے نمٹنے کی خاطربین الاقوامی پروٹوکول پر عمل درآمد کے لیے اپنی پوری وابستگی کا اظہار کرنا ہوگا۔گذشتہ روز اسی منظرنامے کو دہرایا گیا لیکن اس بار آلات اور ذرائع مختلف تھے اور اعداد و شمار میں واضح تبدیلی دیکھی گئی جب حزب اللہ ـ امل تحریک جیسی شعیہ تنظیموں نے مرکزی بنک کے گورنر ریاض سلامہ پر دبائو ڈالتے ہوئے موجودہ معاشی اور مالی خرابی کا ذمہ دار گورنر کو قرار دیا۔ لبنانی بینکاری کے شعبے کے باخبر ذرائع نے بتایا کہ در حقیقت دو اہم جماعتوں کا مشترکہ مفاد ریاض سلامہ کو مرکزی بنک کی گورنری کے عہدے سے ہٹانا ہے۔ اس کی درج ذیل وجوہات ہیں۔لبنان میں جاری سیاسی رسا کشی نے بینکنگ کے نظام اور مالیاتی عمل کو اپنے کھیل کا حصہ بنا دیا ہے۔ مگر اس کھیل کے لبنانی لیرہ پر تباہ کن اثرات مرتب ہوں گے۔ زر مبادلہ کی شرح بلیک مارکیٹ میں گرنے کی صورت میں دیکھنے لیرہ امریکی ڈالر کے مقابلے میں 4000 کی کم ترین سطح پر آگیا ہے۔ اگر موجودہ حالات میں ریاض سلامہ کو مرکزی بنک کے گورنر کے عدیسے ہٹایا جاتا ہے تو اس صورت میں امریکا رد عمل سخت ہوسکتا ہے اور اس کے لبنانی معیشت پر مزید تباہ کن اثرات مرتب ہوں گے۔

مزید خبر یں

اسلام آباد (نیوزڈیسک)اقتصادی رابطہ کمیٹی (ای سی سی) نے دنیا کی 20 بڑی معیشتوں کے حامل ممالک کے گروپ (جی 20) سے قرضوں کو مؤخر کرانے کا معاہدہ کرنے کی منظوری دے دی ہے۔اسلام آباد میں وزیراعظم کے مشیر خزانہ حفیظ شیخ کی زیر صدارت اقتصادی ... تفصیل

نیویارک (نیوزڈیسک)عالمی بینک نے متنبہ  کیا ہے کہ عالمگیر وبا کورونا سے دنیا بھر میں 6 کروڑ افراد انتہائی غربت کا شکار ہوسکتے ہیں۔برطانوی نشریاتی ادارے کی رپورٹ کے مطابق عالمی بینک کے صدر ڈیوڈ میلپاس نے کہا کہ پوری دنیا کو اس وقت عالمگیر وبا ... تفصیل

اسلام آباد (نیوزڈیسک)وزیر اعظم عمران خان نے 'تاریخی مالی جدت' کو سراہا جس کے تحت حکومت نے پاکستان اسٹاک ایکسچینج (پی ایس ایکس) میں مسابقتی عمل (کمپیٹیٹو بک بلڈنگ) کے ذریعے سکوک کے اجرا سے 200 ارب روپے اکٹھے کیے۔ٹوئٹر پر بیان جاری کرتے ہوئے وزیر ... تفصیل