لاہور ہائیکورٹ: وزیراعظم عمران خان کے خلاف عدلیہ مخالف تقاریر کرنے پر توہین عدالت کی درخواست مسترد
اینٹی کرپشن قوانین کی خلاف ورزی پر عمر اکمل معطل، پی ایس ایل سے باہر
کرنٹ اکاؤنٹ خسارہ 7 ماہ میں 72 فیصد کم ہوگیا
حکومت کا مہنگائی کنٹرول نہ کرنے والے افسران کے خلاف کارروائی کا فیصلہ
مشرف غداری کیس کا فیصلہ سنانےوالی عدالت کی تشکیل کالعدم قراردینے کےخلاف درخواست دائر
لاہور ہائیکورٹ :ہم ٹی وی کے ڈرامے ‘عہد وفا’ پر پابندی کے لیے دائر درخواست مسترد
تازہ تر ین

خردبینی جاندار بغیر دماغ کے پیچیدہ فیصلے کرسکتے ہیں، تحقیق

میری لینڈ(نیوزڈیسک)خردبینی جاندار بغیر دماغ کے پیچیدہ فیصلے کرسکتے ہیں۔ہارورڈ میڈیکل اسکول، امریکا کے سائنسدانوں نے دریافت کیا ہے کہ صرف ایک خلیے پر مشتمل، ننھا منا جاندار ”اسٹنٹر روئسیلائی“بھی اتنی سمجھ بوجھ رکھتا ہے کہ اپنے ارد گرد بدلتے حالات کے ردِعمل میں پیچیدہ فیصلے کرسکے، اور اگر کسی فیصلے پر عمل درآمد کا فائدہ نہ ہو تو فوراً ہی اپنی حکمتِ عملی تبدیل کردے۔اس طرح کا طرزِ عمل بالعموم بڑے اور پیچیدہ جانداروں ہی میں دیکھا گیا ہے جو بیک وقت لاکھوں، کروڑوں اور کھربوں خلیوں (سیلز) کا مجموعہ ہوتے ہیں جبکہ ان کا باقاعدہ اعصابی نظام بھی ہوتا ہے جو پیچیدہ اور تفصیلی فیصلے کرنے کا ذمہ دار ہوتا ہے۔ لیکن ایک خلیے پر مشتمل ادنیٰ جانداروں سے ایسی ”سمجھداری“ کی توقع نہیں کی جاتی بلکہ عام طور پر یہ خیال کیا جاتا ہے کہ وہ ایک لگے بندھے انداز ہی میں اپنا کام کرتے ہیں اوراعصابی نظام نہ ہونے کی وجہ سے، انتہائی سادہ قسم کے فیصلے اور حرکات و سکنات انجام دے سکتے ہیں۔اسٹنٹر روئسیلائی بھی ایسا ہی ایک جاندار ہے جو دنیا بھر کے تازہ پانیوں میں پایا جاتا ہے۔ یہ عام طور پر آہستہ بہنے والے یا کھڑے ہوئے تازہ پانی میں موجود ہوتا ہے۔ اس کا پورا جسم صرف ایک خلیے پر مشتمل ہوتا ہے لیکن اسے بیکٹیریا کی جماعت میں شامل نہیں کیا جاتا۔ خردبین کے نیچے اس کی شکل کسی بھونپو کی طرح دکھائی دیتی ہے جبکہ اس پر انتہائی باریک، خردبینی بال ہوتے ہیں جنہیں حرکت دے کر یہ پانی میں اِدھر سے ادھر حرکت کرتا ہے۔تازہ تجربات کے دوران ہارورڈ میڈیکل اسکول کے ماہرین نے اسٹنٹر روئسیلائی کے ساتھ چھیڑ خانی کی اور اسے جان بوجھ کر تنگ کیا۔ پہلے مرحلے میں اس ننھے منے یک خلوی (ایک خلیے والے) جاندار نے اپنے بال ہلا کر اور پانی میں کچھ ذرّات خارج کیے لیکن تنگ کرنے کا سلسلہ جاری رہنے پر وہ اپنی جگہ پر ہی سمٹ گیا، جیسے کہ دبک گیا ہو۔ پھر اس نے اپنا بھونپو جیسا حصہ ہلایا اور سب سے آخری کوشش کے طور پر اس نے اپنی جگہ چھوڑی اور تیزی سے پانی میں تیرتا ہوا کہیں دور چلا گیا۔اس تجربے کی ایک شارٹ ویڈیو یوٹیوب پر بھی رکھی گئی ہے ۔تجربات سے واضح ہوا کہ اگرچہ یک خلوی جانداروں میں دماغ جیسی کوئی چیز نہیں ہوتی لیکن پھر بھی وہ اپنے ارد گرد کے ماحول کو محسوس کرنے اور مختلف حالات کے تحت مختلف ردِ عمل دینے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔

مزید خبر یں

اسلام آباد /بیجنگ (نیوز ڈیسک) چین میں کورونا وائرس میں مبتلا ہونے والے 4 پاکستانی طلبہ صحتیاب ہوگئے ،بیجنگ میں پاکستانی سفارتخانے کی دو رکنی اسپیشل ٹاسک فورس ووہان پہنچ گئی،ٹاسک فورس ممبران کو پاکستان کی خصوصی درخواست پر ووہان جانے کی اجازت دے دی گئی ... تفصیل

جنیوا (نیوز ڈیسک)عالمی ادارہ صحت ڈبلیو ایچ او نے چین سے پھوٹنے والے کورونا وائرس کی وجہ سے ہنگامی خریداری، تقاریب کی منسوخی کے علاوہ کروز شپ سے سفر پر تحفظات کو حد سے زیادہ عالمی ردعمل قرار دیتے ہوئے خبردار کیا ہے۔خبر رساں ادارے اے ... تفصیل

پشاور (نیوزڈیسک) خیبرپختونخوا اور بلوچستان میں پولیو کے 5 نئے کیسز کی تصدیق ہوئی ہے جس کے بعد رواں برس کے ابتدائی ڈیڑھ ماہ میں ملک کے مختلف حصوں میں سامنے آنے والے پولیو کیسز کی تعداد 17 ہوگئی۔ایمرجنسی آپریشن سینٹر خیبر پختونخوا کے مطابق صوبے ... تفصیل