حکومت کا سینیٹ انتخابات میں ہارس ٹریڈنگ کے خاتمے کیلئے اوپن بیلٹ کا فیصلہ
جی 20 سے پاکستان کو قرضوں کی ادائیگی میں 2 ارب ڈالر سے زائد ریلیف ملنے کا امکان
سعودی عرب میں کوڑے مارنے کی سزا کو باضابطہ ختم کردیا گیا
سٹیزن پورٹل سے شہری غیر مطمئن، وزیراعظم کا اداروں کیخلاف تحقیقات کا حکم
کورونا نے پی ٹی آئی کی رکن اسمبلی شاہین رضا کی جان لے لی
ایشیائی ترقیاتی بینک نے پاکستان کو کورونا وباء سے بچاؤ کیلئے 30 کروڑ ڈالر کا قرض فراہم کر دیا
حکومت بلوچستان نے اسمارٹ لاک ڈاؤن میں 2 جون تک توسیع کردی
پاکستان میں 2 ماہ بعد ریلوے آپریشن بحال کر دیا گیا
کرونا وبا،ملک میں 1ہزار سے زائد اموات،مریضو ں کی تعداد47ہزار سے تجاوز کر گئی،13ہزار سے زائدصحتیاب
تازہ تر ین

ماسک یا دستانوں کا استعمال کورونا وائرس کے خطرات بڑھاتا ہے، طبی ماہرین

کراچی(نیوزڈیسک) طبی ماہرین نے خبردار کیا ہے کہ ماسک یا دستانوں کا استعمال کورونا وائرس سے بچاﺅ کے بجائے اس میں مبتلا ہونے کے خطرات بڑھا سکتا ہے۔عالمی ادارہ برائے صحت (ڈبلیو ایچ او)کے حکام کے مطابق کورونا وائرس سے بچنے کیلئے ضروری ہے کہ ہاتھوں کو بار بار دھویا جائے، چہرہ چھونے سے اجتناب جبکہ دوسروں کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے فاصلہ رکھا جائے۔طبی ماہرین نے بتایاکہ جو افراد وائرس سے بچاﺅ کیلئے ماسک کا استعمال کرتے ہیں وہ بس ان کے ذہن کی اختراع ہے، حالانکہ ماسک کے آلودہ ہونے کی زیادہ گنجائش ہے۔ماہرین کی رائے ہے کہ اگر لوگ اپنا چہرہ چھونے سے اجتناب نہیں کرتے تو وائرس سے بچنے کیلئے دستانے پہننے کا بھی کوئی فائدہ نہیں ہے۔عالمی ادارہ صحت کے ایمرجنسی ڈائریکٹر مائیک ریان نے اس بارے میں کہا کہ اس بات کا بہت کم امکان ہے کہ ماسک سے ناک اور منہ ڈھانپ کر آپ اس وائرس سے متاثر ہونے سے محفوظ رہ سکتے ہیں۔ سب سے ضروری بات یہی ہے کہ ہاتھوں کو جتنا ہو سکے صاف ستھرا رکھا جائے اور چہرہ چھونے سے اجتناب کیا جائے۔ماہرین نے کہاکہ ماسک صرف اس صورت میں استعمال کیا جائے جب شبہ ہو کہ آپ یا دوسرا شخص اس مرض میں مبتلا ہے۔ بہرصورت جتنا ہو سکے گھر میں قیام کیا جائے اور غیر ضروری طور پر باہر نہ نکلیں۔2015 میں امریکی جنرل میں چھپنے والی ایک رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ ایک عام شخص ہر گھنٹے میں تقریبا 20 مرتبہ اپنے چہرے کو چھوتا ہے۔کورونا وائرس کی بات کی جائے تو آنکھ، کان اور ناک کے ذریعے انسانی جسم میں داخل ہوتا ہے۔ اس لیے دستانے صاف ستھرے ہاتھوں کا کبھی متبادل نہیں ہو سکتے۔کورونا وائرس کے خطرناک پھیلا ﺅکے پیش نظر یورپی ممالک اٹلی، اسپین اور فرانس میں اس وقت لاک ڈان کی صورتحال ہے لیکن عالمی ادارہ صحت کی جانب سے عوام کو جو احتیاطی تدابیر اختیار کرنے کی خصوصی ہدایات جاری کی گئیں ان میں کوئی تبدیلی نہیں آئی۔ڈبلیو ایچ اور کی جانب سے اندازہ لگایا ہے کہ اس وقت دنیا بھر میں کورونا وائرس سے نبردآزما طبی عملے کو تقریبا ہر ماہ 89 ملین ماسک کی ضرورت پڑ سکتی ہے لیکن خدشہ ہے کہ اس کی قلت کے باعث انھیں مشکلات کا سامنا پڑے۔

مزید خبر یں

جنیوا (نیوزڈیسک)عالمی ادارہ صحت (WHO) نے کرونا وائرس کا مقابلہ کرنے کے لیے عالمی ممالک کے درمیان تعاون کی ضرورت پر زور دیا ہے۔ اب تک دنیا بھر میں اس وبائی مرض کا شکار ہو کر 3.2 لاکھ سے زیادہ افراد اس دنیا سے رخصت ہو ... تفصیل

بیجنگ (نیوزڈیسک) چینی سائنسدانوں نے یقین کا اظہار کیا کہ کورونا وائرس کا علاج دوا سے ممکن ہو گا۔ اس وباء کیلئے ویکسین کی ضرورت نہیں ہو گی۔تفصیلات کے مطابق چین کی ایک لیبارٹری میں کورونا وائرس کے علاج کے لیے دوا تیار کی جا رہی ... تفصیل

اسلام آباد(نیوزڈیسک)معاون خصوصی برائے صحت ڈاکٹر ظفر مرزا نے کہاہے کہ کورونا وبا پر کوئی بھی ملک اکیلے قابو نہیں پاسکتا ، عالمی ادارہ صحت کے رکن ممالک مشترکہ طور پر بہتر طریقے سے وبا سے نمٹ سکتے ہیں ،آبادی کے لحاظ سے دنیا کے پانچویں ... تفصیل