حکومت کا سینیٹ انتخابات میں ہارس ٹریڈنگ کے خاتمے کیلئے اوپن بیلٹ کا فیصلہ
جی 20 سے پاکستان کو قرضوں کی ادائیگی میں 2 ارب ڈالر سے زائد ریلیف ملنے کا امکان
سعودی عرب میں کوڑے مارنے کی سزا کو باضابطہ ختم کردیا گیا
سٹیزن پورٹل سے شہری غیر مطمئن، وزیراعظم کا اداروں کیخلاف تحقیقات کا حکم
کورونا نے پی ٹی آئی کی رکن اسمبلی شاہین رضا کی جان لے لی
ایشیائی ترقیاتی بینک نے پاکستان کو کورونا وباء سے بچاؤ کیلئے 30 کروڑ ڈالر کا قرض فراہم کر دیا
حکومت بلوچستان نے اسمارٹ لاک ڈاؤن میں 2 جون تک توسیع کردی
پاکستان میں 2 ماہ بعد ریلوے آپریشن بحال کر دیا گیا
کرونا وبا،ملک میں 1ہزار سے زائد اموات،مریضو ں کی تعداد47ہزار سے تجاوز کر گئی،13ہزار سے زائدصحتیاب
تازہ تر ین

پاکستان میں کورونا وائرس کے 4 ہزار سے زائد مشتبہ مریض موجود ہیں، ڈاکٹر ظفر مرزا کی تصدیق

اسلام آباد (نیوزڈیسک) وزیر اعظم کے معاون خصوصی برائے صحت ڈاکٹر ظفر مرزا نے کہا ہے کہ پاکستان میں اس وقت کورونا وائرس کے 4ہزار سے زائد مشتبہ مریض ہیں جن میں سے 664 گزشتہ 24گھنٹوں کے دوران رپورٹ ہوئے ہیں، دنیا بھر میں وائرس سے متاثر ہونے والے 92ہزار افراد مکمل طور پر صحتیاب ہو چکے ہیں، پاکستان میں بھی مریض صحت یاب ہورہے ہیں ،آنے والے دنوں میں متعدد افراد کو ہسپتال سے ڈسچارج کردیا جائے گا، 28 فروری سے 17مارچ کے درمیان 6ہزار 304افراد صرف ایران سے پاکستان میں داخل ہوئے جس میں بلوچستان میں 2ہزار 421لوگ ایران سے واپس آئے، خیبر پختونخوا میں 176، پنجبا سے 2ہزار 12، سندھ سے ایک ہزار 59، آزاد جموں و کشمیر کے 14 اور گلگت بلتستان کے 523 افراد ایران سے واپس آئے،ر اس وقت پاکستان کے مختلف صوبوں میں 3ہزار 378افراد کو قرنطینہ میں رکھا گیا ہے،اگر ہم صرف احتیاط سے کام لیتے ہوئے ذمے داری کا مظاہرہ کریں تو ہم اس بیماری کے پھیلاﺅکو پاکستان میں بہت مﺅثر طریقے سے روک سکتے ہیں۔ ہفتہ کو وزیراعظم کے معاون خصوصی برائے صحت ڈاکٹر ظفر مرزا نے اسلام آباد میں چیئرمین نیشنل ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی لیفٹیننٹ جنرل محمد افضال اور وزیر اعظم کے مشیر برائے قومی سلامتی معید یوسف کے ہمراہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کورونا وائرس کے حوالے سے معلومات فراہم کیں۔انہوں نے کہاکہ اس وقت دنیا میں 186ملک ان میں وائرس پھیل چکا ہے اور اس کے مریض ہیں، 2لاکھ 77ہزار سے زائد کیسز رپورٹ ہوئے ہیں اور اب تک 11ہزار 431 اموات ہو چکی ہے۔انہوں نے کہاکہ خوش آئند امر یہ ہے کہ دنیا بھر میں وائرس سے متاثر ہونے والے 92ہزار افراد مکمل طور پر صحتیاب ہو چکے ہیں۔وزیر اعظم کے معاون خصوصی کے مطابق پاکستان میں اس وقت کورونا وائرس کے 4ہزار 46 مشتبہ مریض ہیں تاہم پچھلے 24گھنٹوں میں 664مشتبہ افراد رپورٹ ہوئے ہیں جبکہ ان میں سے 534افراد میں وائرس کی تصدیق ہو چکی ہے۔ڈاکٹر ظفر مرزا نے مزید تفصیلات بتاتے ہوئے کہا کہ پنجاب میں 104 افراد، سندھ میں 259، خیبر پختونخوا میں 27، بلوچستان میں 103، گلگت بلتستان میں 30 اور آزاد جموں و کشمیر میں ایک جبکہ اسلام آباد میں 10افراد میں وائرس کی تصدیق ہو چکی ہے۔پاکستان میں بھی مریض اس مرض سے صحتیاب ہو رہے ہیں اور اب تک 5افراد مکمل طور پر صحتیاب ہو چکے ہیں، آنے والے دنوں میں متعدد افراد کو ہسپتال سے ڈسچارج کردیا جائے گا۔انہوں نے کہا کہ پاکستان میں جن افراد میں وائرس کی تشخیص ہوئی ان میں سے 3 ہلاک ہو چکے ہیں جن میں ایک کراچی، ایک مردان اور ایک پشاور میں ہلاک ہوا۔وزیر اعظم کے معاون خصوصی نے تفتان کے حوالے سے بھی تفصیلات بتاتے ہوئے کہا کہ اس کا مثبت پہلو یہ ہے کہ ہم نے تفتان میں اس طرح کا انتظام کیا تھا کہ جس کی بدولت ہمیں پت چلا کہ کون سے کیسز مثبت ہیں تاکہ ہم ان کی مناسب طریقے سے ان کا علاج معالجہ کر کے صحتیاب کر سکیں۔انہوں نے کہا کہ پچھلے 24گھنٹے میں ملک میں داخلے کے 18 سے 19 مقامات ہیں اور وہاں سے ہم پاکستان آنے والے 13ہزار 991 لوگوں کی اسکریننگ کر چکے ہیں اور اب تک پاکستان میں باہر سے تشریف لانے والے 14لاکھ افراد کی اسکریننگ ہو چکی ہے۔ڈاکٹر ظفر مرزا کے مطابق 28 فروری سے 17مارچ کے درمیان 6ہزار 304افراد صرف ایران سے پاکستان میں داخل ہوئے جس میں بلوچستان میں 2ہزار 421لوگ ایران سے واپس آئے، خیبر پختونخوا میں 176، پنجبا سے 2ہزار 12، سندھ سے ایک ہزار 59، آزاد جموں و کشمیر کے 14 اور گلگت بلتستان کے 523 افراد ایران سے واپس آئے۔انہوں نے کہاکہ یہ فیصلہ کیا گیا تھا کہ جو بھی لوگ ایران سے آرہے ہیں انہیں قرنطینہ میں رکھا جائے گا اور اس وقت پاکستان کے مختلف صوبوں میں 3ہزار 378افراد کو قرنطینہ میں رکھا گیا ہے۔نیشنل ڈیزاسٹر مینجمنٹ کے سربراہ لیفٹیننٹ جنرل محمد افضان نے بتایا کہ سنگل اسکینر اور تھرمل گنز کے ساتھ مسافروں کی اسکریننگ کی جا رہی ہے اور آئندہ 15دن میں چین سے سامان آنے کی صورت میں اس نظام کو مزید مضبوط بنایا جائے گا۔انہوں نے کہاکہ لنڈی کوتل میں قرنطینہ سینٹرز کی تعمیر شروع ہو چکی ہے، اگلے دو سے تین دن میں چمن میں 300 اور تفتان میں 600 کمروں کا قرنطیہن سینٹر بنانے جارہے ہیں،ان تینوں جگہوں پر آئندہ 10 سے 15دنوں میں ایک ہزار مزید کمروں کا اضافہ کیا جائے گا۔

مزید خبر یں

جنیوا (نیوزڈیسک)عالمی ادارہ صحت (WHO) نے کرونا وائرس کا مقابلہ کرنے کے لیے عالمی ممالک کے درمیان تعاون کی ضرورت پر زور دیا ہے۔ اب تک دنیا بھر میں اس وبائی مرض کا شکار ہو کر 3.2 لاکھ سے زیادہ افراد اس دنیا سے رخصت ہو ... تفصیل

بیجنگ (نیوزڈیسک) چینی سائنسدانوں نے یقین کا اظہار کیا کہ کورونا وائرس کا علاج دوا سے ممکن ہو گا۔ اس وباء کیلئے ویکسین کی ضرورت نہیں ہو گی۔تفصیلات کے مطابق چین کی ایک لیبارٹری میں کورونا وائرس کے علاج کے لیے دوا تیار کی جا رہی ... تفصیل

اسلام آباد(نیوزڈیسک)معاون خصوصی برائے صحت ڈاکٹر ظفر مرزا نے کہاہے کہ کورونا وبا پر کوئی بھی ملک اکیلے قابو نہیں پاسکتا ، عالمی ادارہ صحت کے رکن ممالک مشترکہ طور پر بہتر طریقے سے وبا سے نمٹ سکتے ہیں ،آبادی کے لحاظ سے دنیا کے پانچویں ... تفصیل