عمران خان اہل یا نا اہل،سما عت کل ہائیکورٹ میں ہو گی              حمزہ شہباز کو 10 روز کےلئے بیرونِ ملک سفر کرنےکی اجازت دیدی گئی              حکومت کا بنیادی عوامی مسائل کے حل کیلئے نیشنل ایکشن پلان بنانے کا فیصلہ              کھیل کے میدان سے افسوسناک خبر اہم ترین عہدیدار نے تنگ آکر استعفیٰ دیدیا              قطر جانے کے خواہشمند افراد کیلئے بڑی خوشخبری آگئی پاکستانی پروفیشنلز اور ہنرمند افراد متوجہ ہوں، پھر نہ کہنا خبر نہ ہوئی              یو اے ای میں رہائش پذیر پاکستانیوں کیلئے دھماکے دار خبر آگئی ، عام تعطیل کا اعلان کردیاگیا              سیاحوں کی بس میں دھماکہ ، ہلاکتیں ، متعدد زخمی ، افسوسناک واقعہ کہاں پیش آیا ؟ جانئے              پارسل بھیجنا ہو تو دورنہ جائیں، اب ڈاکخانے کا عملہ ہی گھر بلا لیں ایسی سہولت متعارف جان کرآپ بھی دانتوں تلے انگلیاں دبا لینگے              باکمال لوگ ، لاجواب سروس کے شاندار اقدام نے شہریوں کے دل جیت لیئے ،جان کر آپ بھی داد دیئے بغیر نہ رہ سکیں گے              اہم ترین ساہم ترین سیاسی رہنما رشتہ ازدوج میں منسلک ہوگئے، لڑکی کون؟ کس بڑی شخصیت کی بیٹی ہیں ؟ جانئےیاسی رہنما رشتہ ازدوج میں منسلک ہوگئے، لڑکی کون؟ کس بڑی شخصیت کی بیٹی ہیں ؟ جانئے              خوفناک حادثے نے سب کو رُلادیا ، ایک ہی خاندان کے 4 افراد جاں بحق ،ہر طرف چیخ وپکار       
تازہ تر ین

اسی دوران کنوئیں کا منہ کھلا اور کسی نے اپنا پاؤں لٹکا یا اور گرج دار آواز سے مجھ سے کہا اس سےلٹک جاؤ

دشمن کے ذریعے مدد

ابو حمزہ خراسانی کہتے ہیں کہ  میں ایک مرتبہ حج سے واپس آرہا تھا تو اچانک میں کنوئیں میں گر پڑا ۔ میرے دل میں خیال آیا کہ میں کس سے مدد چاہوں۔ پھرمیرے دل میں خیا ل آیا کہ قسم بخدا : میں کسی ے مدد نہیں چاہوں گا۔ یہ خیال ابھی پورا نہیں ہوا تھا کہ دو آدمی اس کنوئیں کے قریب سے گزرے ۔ ایک نے دوسرے سے کہا۔ آؤ ہم اس کنوئیں کا منہ بند کر دیتے ہیں کہ اس میں کوئی گرنہ جائے۔ چنانچہ وہ بانس اور چٹائی لائے اور اس کنوئین کا منہ بند کردیا۔ میں نے یہ دیکھ کر چیخ مارنے کا ارادہ کیا لیکن پھر دل میں خیال آیا کہ میں اس پاک ذات کی طرف چیخ کر فریاد کروں جو ان دونوں سے زیادہ میرے قریب ہے۔

 یہ سوچ کر میں چپ رہا۔ اسی دوران کنوئیں کا منہ کھلا اور کسی نے اپنا پاؤں لٹکا یا اور گرج دار آواز سے مجھ سے کہا اس  سےلٹک جاؤ، میں اس کے ساتھ لٹک گیا۔ جب اس نے مجھے باہر نکالا تو میں دیکھتا ہوں کہ وہ ایک درندہ تھا اور وہ مجھے چھوڑ کر چلا گیا۔ لیکن ھاطف عیبی سے آواز آئی کہ اسے ابو حمزہ کیا یہ ٹھیک نہیں ہو اکہ میں نے تجھے ضائع ہونے سے اس درندے کے ذریعہ سے بچا لیا جو تیرا دشمن تھا۔

(علامہ شہاب الدین قلیوبیؒ)