عمران خان اہل یا نا اہل،سما عت کل ہائیکورٹ میں ہو گی              حمزہ شہباز کو 10 روز کےلئے بیرونِ ملک سفر کرنےکی اجازت دیدی گئی              حکومت کا بنیادی عوامی مسائل کے حل کیلئے نیشنل ایکشن پلان بنانے کا فیصلہ              کھیل کے میدان سے افسوسناک خبر اہم ترین عہدیدار نے تنگ آکر استعفیٰ دیدیا              قطر جانے کے خواہشمند افراد کیلئے بڑی خوشخبری آگئی پاکستانی پروفیشنلز اور ہنرمند افراد متوجہ ہوں، پھر نہ کہنا خبر نہ ہوئی              یو اے ای میں رہائش پذیر پاکستانیوں کیلئے دھماکے دار خبر آگئی ، عام تعطیل کا اعلان کردیاگیا              سیاحوں کی بس میں دھماکہ ، ہلاکتیں ، متعدد زخمی ، افسوسناک واقعہ کہاں پیش آیا ؟ جانئے              پارسل بھیجنا ہو تو دورنہ جائیں، اب ڈاکخانے کا عملہ ہی گھر بلا لیں ایسی سہولت متعارف جان کرآپ بھی دانتوں تلے انگلیاں دبا لینگے              باکمال لوگ ، لاجواب سروس کے شاندار اقدام نے شہریوں کے دل جیت لیئے ،جان کر آپ بھی داد دیئے بغیر نہ رہ سکیں گے              اہم ترین ساہم ترین سیاسی رہنما رشتہ ازدوج میں منسلک ہوگئے، لڑکی کون؟ کس بڑی شخصیت کی بیٹی ہیں ؟ جانئےیاسی رہنما رشتہ ازدوج میں منسلک ہوگئے، لڑکی کون؟ کس بڑی شخصیت کی بیٹی ہیں ؟ جانئے              خوفناک حادثے نے سب کو رُلادیا ، ایک ہی خاندان کے 4 افراد جاں بحق ،ہر طرف چیخ وپکار       
تازہ تر ین

دْنیا کے بلند ترین شہر میں انسانی زندگی پر اثرات کی جان کاری کی مہم

پیرس (این این آئی) اٹلی اور فرانس کے 14 سائنسدانوں نے آئندہ جنوری میں دنیا کے بلند ترین شہر کے مطالعاتی دورے کا اعلان کیا ہے۔

سائنسدان یہ جاننا چاہتے ہیں کہ بلند ترین شہرمیں رہنے والے لوگوں کی جسمانی کیفیات زمین کے دوسرے حصوں میں آباد لوگوں سے کس طرح مختلف ہیں۔ اس کے ساتھ ساتھ وہ اس مشن سے یہ جاننے کی کوشش کریں گے کہ آیا کم سے کم آکسیجن کے ماحول میں انسانی جسم میں کیا دفاعی میکنزم اختیارکرتا ہے۔

غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق یہ سائنسی تحقیقاتی مشن فرانسیسی بین الاقوامی ریسرچ انسٹیٹیوٹ فار ہیلتھ اینڈ سائنس ریسرچ کی جانب سے پیرو کے بلند وبالا شہر لارینکوناڈا بھیجا جائے گا۔

تحقیقاتی مشن میں شامل سائنسدانوں نے پیرس میں ایک پریس کانفرنس سے خطاب میں کہا کہ  عام نظریہ یہ ہے کہ انسان سطح سمندر سے 5 ہزارمیٹر کی بلندی پر رہ سکتا ہے۔ لارینکوناڈا کیباشندے اس زیادہ بلندی پر ہیں اور ان کے بارے میں جان کاری ہمارے لیے ایک چیلنج ہوگی۔

یہ شہر پیرو کے الانڈیس پہاڑی سلسلے میں سطح سمندر سے 5300 میٹر کی بلندی پر واقع ہے اور اس میں سخت ترین حالات میں 50 ہزار افراد بستے ہیں۔یہاں کی آبادی کو آکسیجن کی کمی کا سامنا ہے اور ان کے ہاں بعض انوکھی بیماریاں بھی ہوتیں۔ ماہرین کا خیال ہے کہ ان امراض کا تعلق یہاں کی بلندی اور کم آکسیجن کے ساتھ ہوسکتا ہے۔ 3

دن وہاں قیام کے دوران سائنسدان ان بیماریوں کی ماہیت اور ان کے علاج پر بھی تحقیق کریں گے۔ ماہرین کا کہناتھا کہ اس مطالعاتی دورے کے نتائج میں سائنس دانوں کویہ سمجھے میں مدد ملے گی کہ آیا کم آکسیجن انسانی جسم کو کس طرح کا دفاعی میکنزم اختیار کرنا ہوگا۔

اس طرح ایسے ماحول میں پیدا ہونے والی بیماریوں یا گہرائی میں موجود مقامات میں نظام تنفس کو کیسے فعال رکھا جاسکتا ہے۔

مزید خبر یں

نیروبی (نیوزڈیسک)کینیا کے دارالحکومت نیروبی میں ایک پرتعیش ہوٹل پر شدت پسند تنظیم الشباب کے حملے میں 21 افراد ہلاک ہو گئے،کئی گھنٹے تک جاری فائرنگ کے بعد سیکورٹی فورسز نے علاقہ کلیئر کرانے کا دعویٰ کیا ہے تاہم ابھی تک ہلاک اورزخمی افرادکے بارے میں ... تفصیل

لندن (نیوزڈیسک)برطانوی پارلیمنٹ کی جانب سے یورپی یونین سے اخراج کا بریگزٹ معاہدہ بھاری اکثریت سے مسترد کیے جانے کے بعد وزیراعظم ٹریزا مے کے خلاف تحریکِ عدم اعتماد پیش کر دی گئی ،ادھر یورپی کونسل کے صدر ڈونلڈ ٹسک نے تجویز دی ہے کہ موجودہ ... تفصیل

انقرہ(نیوزڈیسک)خلیجی ریاست قطر کی جانب سے ترکی کے ساتھ دوستانہ مراسم کے تحت ترکی پر خصوصی نوازشات جاری ہیں۔ دونوں ملکوںکے درمیان دو سال قبل طے پائے دفاعی معاہدے کے تحت قطر نہ نے صرف اپنی زمین پر ترکی جو فوج اڈہ بنانے کی اجازت دی ... تفصیل