لورالائی میں سیکورٹی فورسز کا آپریشن ،کالعدم تحریک طالبان پاکستان کا اہم کمانڈر 4ساتھیوں سمیت ہلاک              حکومت کا شہبازشریف کا نام ای سی ایل سے نکالنے کےفیصلے کو سپریم کورٹ میں چیلنج کرنے کا فیصلہ              وزیر پٹرولیم نے گیس کی قیمتوں میں مزید اضافے کا عندیہ دے دیا              پاکستان نے غیرملکی سیاحوں کے ویزے کیلئے این اوسی کی شرط ختم کردی              منی لانڈرنگ کیس منتقلی کیخلاف اپیل، آصف زرداری کو جواب الجواب جمع کرانے کا حکم              لاہور ہائیکورٹ کا شہباز شریف کا نام ای سی ایل سے خارج کر نے کا حکم              سپریم کورٹ نے نواز شریف کی درخواست ضمانت منظور کر لی       
تازہ تر ین

وسط مدتی انتخابات ٹرمپ کے لئے آخری موقع قرار،امریکی شہریوں کی اکثریتی رائے

sad trumph

واشنگٹن (انٹرنیشنل ڈیسک ) امریکہ کے نصف مدتی انتخابات کے حوالے سے امریکہ میں کئے گئے سروے میں حیران کن انکشافات سامنے آگئے۔ریپبلکن پارٹی کو ووٹ دینے والوں میں سے تقریبا42ً فیصد امریکی شہریوں نے صدر ٹرمپ کو آخری موقع دیتے ہوئے کہا ہے کہ سینیٹ میں پوزیشن مضبوط ہونے کے باوجود اب بھی اگر امریکی شہریوں کے لئے بہتری نہ لا سکے، تو پھر 2020 میں ہونیوالے انتخابات میں صدر ریپبلکن پارٹی سے نہیں ہو سکتا،

ڈونلڈ ٹرمپ اپنی ان پالیسیوں پر نظر ثانی کریں جن پر امریکی شہریوں کو تحفظات ہیں جبکہ ٹرمپ کا مواخذہ اور ان کی فارن پالیسیوں کے فیصلوں پر نظر ثانی میں کانگریس کو بہت مشکلات پیدا ہوں گی۔نجی ٹی و ی کی جانب سے کرائے گئے ایک سروے میں 36 فیصد امریکی شہریوں نے کہاکہ وہ صرف ریپبلکن پارٹی کیساتھ ہیں، ان کی پالیسیوں سے اتفاق کرتے ہیں، اور اگر کہیں درست کرنے کی جگہ ہے تو وہ اب پالیسیوں پر عملدرآمد ہونے سے بہتر ہو پائیگا، وہ شروع سے ہی ریپبلکن پارٹی کیساتھ ہی رہے ہیں، اور اب بھی ان کے ساتھ ہی رہیں گے جبکہ 22 فیصد شہریوں نے یہ کہا کہ وہ ووٹ پہلے ڈیموکریٹ پارٹی کو دیتے تھے، گزشتہ انتخابات میں ووٹ کا استعمال کرتے ہوئے ٹرمپ کو صدر لائے تھے لیکن اس بار ایک اور موقع دینا چاہیے۔ان 100 شہریوں سے بات کی گئی جنہوں نے ریپبلکن پارٹی کوووٹ دیا، ان میں سے 42 امریکی شہریوں نے بتایا کہ امریکی صدرڈونلڈ ٹرمپ امریکہ کی بات ہی کرتے ہیں اور شاید وہ امریکہ کے معاملات کو دیکھ کر ہی کچھ ایسی پالیسیوں پر اقدامات کرنے کا ارادہ رکھتے ہیں جس سے بہت سے مسائل حل ہوپائیں گے اور اس سے آئندہ ہونیوالے صدارتی انتخاب میں ریپبلکن پارٹی کا ہی صدر منتخب ہو سکتا ہے،

لیکن یہ بات واضح ہے کہ اب دونوں پارٹیوں کے درمیان مقابلہ انتہائی سخت ہو گا، انتخابات کے نتائج بتاتے ہیں کہ ابھی بھی امریکہ میں ریپبلکن پارٹی ہی مضبوط ہے، سینیٹ میں پوزیشن مضبوط ہونا یہ بات واضح کرتی ہے کہ ڈونلڈ ٹرمپ کے کچھ فیصلے اچھے بھی ہیں اور اب وہ پالیسیوں پر عملدرآمد کر کے امریکی شہریوں کے مسائل کو کم کر سکتے ہیں۔اگر اب بھی کچھ نہ کیا تو پھر خطرہ یہ ہے کہ شاید صدارتی انتخاب 2020 میں کہیں ڈیموکریٹ پارٹی کا ہی صدر منتخب نہ ہو جائے کیونکہ وہ صرف امریکی شہریوں کے مسائل کو فوکس کر رہے ہیں، ان کی جانب سے نصف مدتی انتخابات میں جو مہم چلائی گئی تھی اس میں دوسرے نمبر پر ٹرمپ کے معاملات کو رکھا تھا، جبکہ پہلے نمبر پر ڈومیسٹک مسائل کو رکھا گیا تھا۔ 36 فیصد شہریوں نے واضح کیا ہے کہ چاہے کچھ بھی ہو جائے وہ ریپبلکن پارٹی کے ساتھ ہی کھڑے ہیں اور انہی کو سپورٹ کرتے رہیں گے ، انکا کہنا تھا کہ وہ ٹرمپ کے چاہنے والے ہیں اور وہ جو بھی کر رہے ہیں وہ امریکہ اور اس کے شہریوں کے لئے بہت بہتر ہے، کچھ ایسے معاملات سامنے لائے جار ہے ہیں جس سے یہ ثابت کرنے کی کوشش کی جارہی ہے کہ شاید ٹرمپ کی مقبولیت کم ہوگئی لیکن ان کے دلوں میں ٹرمپ کے لئے محبت مزید بڑھ گئی ہے جبکہ 22 فیصد شہریوں نے انتخابات پر کسی قسم کی بات کرنے سے گریز کیا۔

مزید خبر یں

استنبول(نیوز ڈیسک)ترک صدر رجب طیب ایردوآن نے ایک مرتبہ پھر واضح کیا ہے کہ امریکا جو کچھ بھی کہتا رہے، ترکی روس سے ایس 400 میزائل دفاعی نظام کی خریداری کے سودے سے پیچھے نہیں ہٹے گا۔انھوں نے یہ بات ترک نشریاتی ادارے سے ایک انٹرویو ... تفصیل

لندن (نیوز ڈیسک)برطانوی وزیر اعظم ٹریزا مے نے تسلیم کیا ہے کہ ان کے پاس ترمیم شدہ بریگزٹ معاہدے کو پارلیمان سے منظور کرانے کے لیے درکار حمایت موجود نہیں ہے۔میڈیارپورٹس کے مطابق اگر برطانیہ بریگزٹ کی تاریخ میں 22 مئی تک کی توسیع چاہتا ہے ... تفصیل

ریاض(نیوز ڈیسک)سعودی عرب نے مقبوضہ گولان کے شامی علاقے پر اسرائیل کی خود مختاری کو تسلیم کرنے سے متعلق امریکی اعلان کو مکمل طور پر مسترد کرتے ہوئے اس کی شدید مذمت کی ہے۔میڈیارپورٹس کے مطابق سعودی وزارت خارجہ نے جاری ایک بیان میں گولان کے ... تفصیل