کھیل کے میدان سے افسوسناک خبر اہم ترین عہدیدار نے تنگ آکر استعفیٰ دیدیا              قطر جانے کے خواہشمند افراد کیلئے بڑی خوشخبری آگئی پاکستانی پروفیشنلز اور ہنرمند افراد متوجہ ہوں، پھر نہ کہنا خبر نہ ہوئی              یو اے ای میں رہائش پذیر پاکستانیوں کیلئے دھماکے دار خبر آگئی ، عام تعطیل کا اعلان کردیاگیا              سیاحوں کی بس میں دھماکہ ، ہلاکتیں ، متعدد زخمی ، افسوسناک واقعہ کہاں پیش آیا ؟ جانئے              پارسل بھیجنا ہو تو دورنہ جائیں، اب ڈاکخانے کا عملہ ہی گھر بلا لیں ایسی سہولت متعارف جان کرآپ بھی دانتوں تلے انگلیاں دبا لینگے              باکمال لوگ ، لاجواب سروس کے شاندار اقدام نے شہریوں کے دل جیت لیئے ،جان کر آپ بھی داد دیئے بغیر نہ رہ سکیں گے              اہم ترین ساہم ترین سیاسی رہنما رشتہ ازدوج میں منسلک ہوگئے، لڑکی کون؟ کس بڑی شخصیت کی بیٹی ہیں ؟ جانئےیاسی رہنما رشتہ ازدوج میں منسلک ہوگئے، لڑکی کون؟ کس بڑی شخصیت کی بیٹی ہیں ؟ جانئے              خوفناک حادثے نے سب کو رُلادیا ، ایک ہی خاندان کے 4 افراد جاں بحق ،ہر طرف چیخ وپکار       
تازہ تر ین

پہلی عالمی جنگ کے خاتمے کا معاہدہ،سوسال مکمل ہونے پر دنیا بھر میں تقاریب منعقد

world war 1

پیرس(انٹرنیشنل ڈیسک)جرمن چانسلر میرکل اور فرانسیسی صدر ماکروں نے فرانسیسی علاقے ریتھونز کا دورہ کیا، جہاں ٹھیک سو برس قبل پہلی عالمی جنگ کے خاتمے کی خاطر ایک تاریخی معاہدہ ہوا تھا۔ ان دونوں رہنماؤں نے ایک یادگاری تقریب میں بھی شرکت کی۔غیرملکی خبررساں ادار ے کے مطابق فرانسیسی دارالحکومت پیرس سے چھپن کلومیٹر دور واقع کومپیئنئے کے جنگلات کو تاریخ میں ایک اہم حیثیت حاصل ہے۔

گیارہ نومبر 1918کے دن اسی مقام پر واقع ریتھونز میں پہلی عالمی جنگ کے خاتمے کی خاطر ایک ڈیل طے کی گئی تھی۔ جرمنوں اور اتحادی فورسز نے سن 1918 میں 11ویں ماہ کی گیارہ تاریخ کو گیارہ بجے کے قریب ٹرین کی ایک بوگی میں ایک ابتدائی معاہدہ کو حتمی شکل دی تھی کہ چار سالہ عالمی جنگ کا خاتمہ ممکن بنایا جا سکے۔

اسی دن کی یاد تازہ کرنے کی خاطر جرمن چانسلر میرکل اور فرانسیسی صدر ایمانوئل ماکروں نے اس مقام کا دورہ کیا اور پرانی یادوں کو تازہ کیا۔ اس موقع پر ان دونوں رہنماؤں نے علامتی طور پر دستخط کرنے کی تقریب کو دہرایا۔پہلی عالمی جنگ کے خاتمے کے سو برس مکمل ہونے پر ویک اینڈ پر کئی یادگاری تقریبات کا انعقاد کیا گیا، جن میں 67 ممالک کے رہنما شریک ہو ئے۔پہلی عالمی جنگ کو دنیا کی تاریخ کی بدترین جنگی مہم قرار دیا جاتا ہے۔ اس چار سالہ تنازعے میں فرانسیسی فوج کے 1.4 جبکہ دو ملین جرمن سپاہی لقمہ اجل بن گئے تھے۔

یہ جنگ سن 1914 تا سن 1918 جاری رہی۔ اس جنگ میں مجموعی طور پر چالیس ملین افراد ہلاک یا زخمی ہوئے تھے۔ اس جنگ میں 70 ملین فوجیوں نے حصہ لیا تھا۔ فرانس کے علاوہ دنیا کے دیگر ممالک میں بھی اس مناسبت سے یادگاری تقریبات کا انعقاد کیا گیا۔لندن میں منعقد ہونے والی ایک ایسی ہی تقریب میں جرمن صدر فرانک والٹر شٹائن مائر شریک ہوئے ۔ اتوار کے دن منعقد ہونے والی اس تقریب میں ملکہ الزبتھ کے علاوہ برطانوی وزیر اعظم ٹریزا مے بھی شامل تھیں۔

مزید خبر یں

کابل(نیوزڈیسک)افغانستان کیلئے امریکی خصوصی ایلچی نے کہا ہے کہ امریکا عن قریب طالبان کے ساتھ مذاکرات کی ایک اور کوشش کرے گا،اگر طالبان جنگ سے باز نہ آئے تو امریکا افغان فوج کی طالبان کے خلاف کارروائیوں میں معاونت جاری رکھے گا۔غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق ... تفصیل

طرابلس (نیوزڈیسک)لیبیا کی فوج نے خبردار کیا ہے کہ ملک میں ترکی اور قطر کی جانب سے جاری مداخلت کے سنگین نتائج سامنے آئیں گے۔غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق فوجی ترجمان بریگیڈیئر احمد المسماری کا کہنا تھا کہ جنوبی لیبیا میں جاری الکرامہ فوجی آپریشن کے ... تفصیل

دبئی (نیوزڈیسک)متحدہ عرب امارات کی ایک فضائی کمپنی فلائی دبئی نے کہا ہے کہ کمپنی شام کے لیے کمرشل پروازوں کی بحالی کے حوالے سے جنرل سول ایوی ایشن اتھارٹی کے احکامات کی منتظر ہے۔عرب ٹی وی کے مطابق کمپنی کے ترجمان کا کہنا تھا کہ ... تفصیل