کر اچی:مفتی تقی عثمانی کے قافلے پر فائرنگ ،2افراد جاں بحق              پاکستان پیپلز پارٹی کا نیشنل ایکشن پلان پر حکومتی بریفنگ کے بائیکاٹ کا فیصلہ              اٹک میں گھر کی چھت گرنے سے 6افراد جا ں بحق       
تازہ تر ین

فروری کے دوسرے ہفتے میں بسنت منائی جائیگی یا نہیں ۔۔۔۔ پنجاب حکومت نے بڑا اعلان کر دیا

لاہور(نیو زڈیسک) وزیر اطلاعات پنجاب فیاض الحسن چوہان نے فروری کے دوسرے ہفتے میں بسنت منانے کا اعلان کر دیا ہے ، لاہور میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ ثقافتی حلقوں کی جانب سے بسنت منانے کا مطالبہ کیا جا رہا تھا ، اب بسنت کو فروری کے دوسرے ہفتے میں منانے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔انھوں نے کہا کہ لاہور کی سول سوسائٹی اور شہریوں کی بڑی تعداد لاہور سمیات پنجاب میں ثقافتی سرگرمیوں کو عروج دینے کے لیے بسنت منانے کا مطالبہ کر رہی ہے جس پر عملدرآمد کا فیصلہ کیا گیا ہے ۔بسنت کے دوران سیکیورٹی انتظامات اور شہریوں کے جان و مال کے تحفظ کے لیے تجاویز مرتب کرنے کے لیے کمیٹی تشکیل دے دی گئی ہے جو کہ ایک ہفتے کے اندر اپنی رپورٹ جمع کرائے گی ۔ایک وقت تھا جب ماہِ فروری شروع ہوتے ہی زندہ دلانِ لاہور موسم بہار کا استقبال بسنت منا کر کرتے تھے۔ شہرِ لاہور کی سڑکوں کو دلہن کی طرح رنگ برنگی پتنگوں سے سجایا جاتا تھا۔ سڑکوں کی درمیانی کیاریاں گیندے کے بسنتی پھولوں سے راہگیروں کو آمدِ بہار کی نوید سناتی تھیں۔ نئے سال کے پہلے مہینے سے ہی نیلا آسمان دیدہ زیب رنگوں کی پتنگوں سے سجنے لگتا تھا۔ ہر اتوار کے اتوار فضا بوکاٹا اور آئی بُو کی آوازوں سے گونجتا تھا۔ ہوٹلز، ریسٹورنٹس، پارکس اور میدانوں میں بسنت میلوں کا انعقاد کیا جاتا تھا۔شہر کی سڑکوں کے کناروں پر ڈور ساز اڈّے لگائےڈوریں تیار کرتے دکھائی دیتے تھے۔ گلی محلے کی دکانیں بسنتی سیزن کو کیش کروانے کے لیے اضافی کاروبار کرتے ہوئے پتنگیں بھی بیچا کرتی تھیں ، کیٹرنگ والوں کے پاس گاہکوں کا تانتابندھارہتاتھا۔اندرونِ لاہور کی چھتوں کی ایڈوانس بکنگ مہینوں پہلے سے ہی شروع ہو جایا کرتی تھیں۔ لوگ گاڑی کی ڈگیاں بھرے اور موٹر سائیکل سوّار گڈّے اور پریاں تھامے سڑکوں پر جاتے دکھائیدیتے تھے۔عیدکی چاند رات کی طرح بسنت کی چاند رات بھی جوشیلے لاہوریوں کے لیے ایک خاص اہمیت رکھتی تھی۔ ہفتے کی شام کو شروع ہونے والی بسنت اتوار کو بعد از مغرب ختم ہوتی تھی۔مگر پھر وقت آیا جب میڈیا پر خطرناک ڈور کے ہاتھوں ہلاک ہونے والوں کی خبریں بریکنگ نیوز کے طور پر نشر ہونے لگیں۔ شام کے اوقات میں چلنے والے حالاتِ حاضرہ کے پروگرام زہریلی ڈور کے ہاتھوں ہلاکتوں کا ذمہ دار حکومت کو ٹھہرانے لگے۔ مذہبی سیاسی جماعتیں بسنت کو ہندوانہ تہوار گردانتے ہوئے اسے غیر اسلامی قرار دینے لگے۔اس طرح پوری دنیا میں مشہور لاہوری بسنت کو جلنے والوں کی نظر لگ گئی۔ حکومت نے اموات کا سبب بنے والی خطرناک ڈور پر پابندی لگانے کے بجائے بسنت پر ہی پابندی لگا دی۔

مزید خبر یں

استنبول (نیوزڈیسک)وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہاہے کہ کرائسٹ چرچ واقعہ زیادہ خطرناک اور سرایت کرجانے والے موذی مرض کی موجودگی کی جھلک ہے،اسلاموفوبیا کے خلاف متحدہ محاذ تشکیل دیاجائے۔وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی نے او آئی سی کے ہنگامی اجلاس سے خطاب کرتے ... تفصیل

اسلام آباد (نیوز ڈیسک)ملائیشیا کے وزیر اعظم مہاتیر محمد خان نے کہا ہے کہ بدعنوانی کے حوالے سے بہت تشویش ہے، کرپشن کے خاتمے سے متعلق پاکستان ہمارے تجربات سے استفادہ کرسکتاہے۔تفصیلات کے مطابق وزیراعظم عمران خان اور ان کے ملائیشین ہم منصب ڈاکٹر مہاتیر محمد ... تفصیل

اسلام آباد(نیوز ڈیسک)پاکستان پیپلز پارٹی نے نیشنل ایکشن پلان پر حکومتی بریفنگ کے بائیکاٹ کا فیصلہ کیا ہے۔ میڈیا سے گفتگو میں پاکستان پیپلزپارٹی کے رہنما خورشید شاہ نے کہا کہ بریفنگ دفتر خارجہ کے بجائے پارلیمنٹ میں دی جائے، عمران خان پارلیمنٹ کی بالا دستی ... تفصیل