برطانیہ ، پاکستانی ہائی کمیشن نے برطانوی شہریوں کیلئے ای ویزا کا اجراءشروع کر دیا              حکومت سندھ نے ایک بارپھرسرکاری ملازمتوں پرپابندی عائد کردی              مفتی تقی عثمانی حملہ: 6 افراد کے خلاف دہشت گردی کا مقدمہ درج              پشاور بس منصوبے کا افتتاح غیر معینہ مدت تک ملتوی              سابق وزیر اعظم شوکت عزیز کے وارنٹ گرفتار ی جاری              صدر ٹرمپ اور اتحادی افواج کا شام سے داعش کے مکمل خاتمے کا اعلان              ڈیم فنڈ: کینیڈا میں عمران خان کے دستخط شدہ 2 بلے 65 ہزار ڈالرز میں نیلام              یوم پاکستان ،مسلح افواج کی شاندار پریڈ ،ٹینکوں اور میزائلوں کی نمائش ،جے ایف 17 تھنڈر طیاروں کا شاندار کرتب دکھا کر پیشہ وارانہ صلاحیتوں کا مظاہرہ              بھارت نے یسین ملک کی جماعت جموں کشمیر لبریشن فرنٹ پر پابندی لگادی       
تازہ تر ین

نوازشریف نے کوٹ لکھپت جیل کا انتخاب کس کیلئے کیا؟ جان کر آپ بھی داد دیئے بغیر نہ رہ سکیں گے

اسلام آباد(نیو زڈیسک) نوازشریف نے کوٹ لکھپت جیل کا انتخاب بوڑھی والدہ سے ملاقات کیلئے کیا، اڈیالہ جیل میں عمررسیدہ خاتون شمیم اختر کو سفر کرنے میں دشواری کا سامنا کرنا پڑتا، جبکہ نوازشریف بوڑھی والدہ اور بیٹیوں سے ہر ہفتے ملاقات کرنا چاہتے ہیں۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق سابق وزیراعظم نوازشریف کو العزیزیہ اسٹیل ملز ریفرنس میں احتساب عدالت نے سات سال قید بامشقت اور بھاری جرمانہ عائد کرنے کے ساتھ دس سال کیلئے نااہل بھی قرار دیا ہے۔جبکہ نوازشریف کی العزیزیہ اسٹیل ملز سے متعلق اثاثے اور جائیداد ضبطگی کا بھی حکم دیا ہے۔تاہم احتساب عدالت نے گزشتہ روز اپنے فیصلے میں سابق وزیراعظم نوازشریف جو فلیگ شپ ریفرنس میں بری کردیا ہے۔احتساب عدالت کے فیصلے کے پیش نظر پہلے ہی اڈیالہ جیل میں نوازشریف کیلئے کمرہ مختص کرتے ہوئے بہترین تیاری کا اہتمام کیا گیا تھا۔تاہم سابق وزیراعظم نوازشریف کو احتساب عدالت میں جب گرفتار کیا گیا توانہوں نے اڈیالہ جیل جانے کی بجائے لاہور جیل میں منتقل کرنے کی درخواست کی۔انہوں نے احتساب عدالت سے اپیل کی کہ مجھے کوٹ لکھپت جیل میں رکھا جائے۔ جس پر عدالت نے نوازشریف کو کوٹ لکھپت جیل بھیجنے کا حکم دے دیا۔نوازشریف کی جانب سے اڈیالہ جیل کی بجائے کوٹ لکھپت جیل کا انتخاب کرنے پر لوگوں کے ذہنوں میں کئی سوالات نے جنم لیا کہ نوازشریف اڈیالہ جیل میں کیوں نہیں رہنا چاہتے۔ذرائع کا کہنا ہے کہ سابق وزیراعظم نوازشریف نے کوٹ لکھپت جیل کا انتخاب کرنے کی کچھ وجوہات ہیں۔سابق وزیراعلیٰ پنجاب شہبازشریف اڈیالہ جیل میں قید ہیں۔ نوازشریف بھی کوٹ لکھپت جیل میں اپنے بھائی کے ساتھ رہنا چاہتے تھے۔ دوسری وجہ نوازشریف چاہتے ہیں کہ لاہور میں پارٹی رہنماؤں کی ان سے ملاقات میں آسانی ہوگی۔کیونکہ کارکنان کو اڈیالہ جیل میں جانے کیلئے کافی دشواری کا سامنا تھا۔ جبکہ سب سے اہم وجہ یہ ہے کہ سابق وزیراعظم نوازشریف اپنی والدہ بیگم شمیم اختر اور بیٹی مریم نوازکی وجہ سے کوٹ لکھپت جیل میں رہنا چاہتے ہیں۔نوازشریف کے نزدیک کوٹ لکھپت جیل میں ان کی والدہ کو ملاقات میں آسانی ہوگی۔نوازشریف چاہتے ہیں کہ ان کی والدہ کی ان کے ساتھ ہرہفتے ملاقات ہو، اور مریم نوازبھی ملاقات کرسکیں گی۔جبکہ گھر کا کھانا اور ضروری اشیاء کے حصول کیلئے بھی آسانی ہوگی۔واضح رہے گزشتہ روز نوازشریف نے بھی گرفتاری کے موقع پر گفتگو کرتے ہوئے کہا تھا کہ میرا ضمیر مطمئن ہے کہ مجھ پر کوئی کرپشن کا الزام نہیں ہے۔ میرا حوصلہ بلند ہے۔ مجھے اپنی کوئی فکر نہیں ہے۔ تاہم میری والدہ 80سالہ بوڑھی خاتون ہے۔اپنی والدہ کیلئے میرا دل روتا ہے۔ دوسری جانب معلوم ہوا ہے کہ سابق وزیراعظم نوازشریف کو ان کے بھائی شہبازشریف کی بیرک میں ہی رکھا جائے گا۔

مزید خبر یں

اسلام آباد (نیوز ڈیسک)یوم پاکستان کے موقع پر سابق صدر اور پاکستان پیپلز پارٹی کے شریک چیئرمین آصف علی زرداری نے کہا ہے کہ وطن عزیز کی سلامتی اور خود مختاری کے لیے ہر قربانی دیں گے۔یوم پاکستان کے موقع پر اپنے پیغام میں آصف علی ... تفصیل

لاہور ( نیوز ڈیسک) امیر جماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق نے کہاہے کہ پاکستان عالم اسلام کا دھڑکتا ہوا دل ہے ،مدینہ کی ریاست کے بعد دنیا میں پاکستان دوسری ریاست ہے جو کلمہ طیبہ کی بنیاد پر قائم ہوئی ، پاکستان کے آئین میں ... تفصیل

اسلام آباد (نیوز ڈیسک)پاکستان مسلم لیگ (ن) کے صدر اور قومی اسمبلی میں قائد حزب اختلاف شہباز شریف نے کہا ہے کہ یوم پاکستان اس بات کی یاد دلاتا ہے کہ ہم نے یہ ملک عظیم مقاصد کے حصول کے لیے حاصل کیا، ہمیں اس منزل ... تفصیل