دفترخارجہ کانیوزی لینڈ سانحے میں شہید ہونے والے 4 افراد کے ورثا کے لئے ویزہ کی سہولت کا اعلان              پیپلزپارٹی نے رابطہ عوام مہم شروع کرنے کا اعلان کردیا              سابق وفاقی وزیر کامران مائیکل پر سفری پابندی عائد              سینیٹ کمیٹی: سعودی ولی عہد کے دورہ پاکستان میں آنے والے اخراجات کی تفصیلات طلب              سانحہ نیوزی لینڈ : شہید پاکستانیوں کی تعداد 6 ہوگئی              پاک فوج نے بھارت کاجاسوس ڈرون مار گرایا              شیخ رشید کا وزیر اعظم کی جانب سے مزدوروں کےلئے تین ، تین ہزار روپے انعام کا اعلان              کرائسٹ چرچ مساجد پر حملہ کرنے والا انتہا پسند عدالت میں پیش،قتل کا الزام عائد              آصف زرداری نے میگا منی لانڈرنگ کیس کی اسلام آباد منتقلی کا فیصلہ چیلنج کردیا       
تازہ تر ین

علی رضا عابدی کو موبائل پر کس کی کالز موصول ہو رہی تھی ؟دوران تفتیش تہلکہ خیز انکشاف نے کھلبلی مچادی

اسلام آباد(نیو زڈیسک)ایم کیو ایم کےسابق رہنما سید علی رضا عابدی کو کئی دنوں سے دھمکی آمیز فون کال بھی مل رہی تھی جس کا ذکر انہوں نے اپنے دوستوں سے بھی کیا تھا، وہ ایم کیو ایم کے انتہائی پڑھے لکھے رہنماؤں میں سے تھے، وہ 6 جولائی 1972ءکو کراچی میں پیدا ہوئے، مرحوم پچھلے کئی دنوں سے ایم کیو ایم کے تمام گروپس میں اتحاد کے لئے کوشاں تھے،اس حوالے سے انہوں نے ایک مصالحتی کمیٹی بھی بنائی تھی اور ذاتی طور پر اپنے پلان کے بارے میں ایم کیو ایم کے رہنماؤں سے رابطہ بھی کیا تھا۔قومی اخبار کے مطابق علی رضا عابدی نے اس حوالے سے مہاجر قومی موومنٹ، پاک سر زمین پارٹی اور ایم آ ئی ٹی کے رہنماؤں سے بھی رابطہ کیا تھا،ان کا کہنا تھا کہ 2018ءکے عام انتخاب میں ایم کیو ایم کو بڑا دھچکہ لگا تھا، جس کے ازالے کے لیے مہاجر قوم، کراچی اور سندھ کے تمام سیاسی رہنماؤں کو متحد ہونا پڑے گا تاکہ آئندہ بلدیاتی انتخاب میں سندھ کے شہری علاقوں سے ان کی اصل قیادت سامنے آسکے اور ان کے مسائل حل ہوسکے، انہوں نے ایم کیو ایم پاکستان بہادر آباد کی قیادت سے بھی اپیل کی تھی کہ کراچی اور مہاجروں کو نقصان سے بچا نے کے لئے حکمت عملی بنائی جائے علی رضا عابدی نے رواں سال اگست کے آ خر میں بعض امور پر اختلافات کی وجہ سےایم کیو ایم کی بنیادی رکنیت سے استعفی دے دیا تھا جس کے بعد ان سے پی ٹی آئی، پاکستان مسلم لیگ (ن) اور پی پی نے بھی شمولیت کے لئے رابطہ کیا تھا، علی رضا عابدی کے والد سید اخلاق حسین بھی ایم کیو ایم کی جانب سے2003کے عام انتخاب میں رکن قومی اسمبلی رہ چکے ہیں، ان کے خاندان کی اکثریت ایم کیو ایم کی حامی رہی ہے۔علی رضا عابدی 2008سے2015تک ایم کیو ایم کے شعبہ اطلاعات سے وا بستہ رہے ان کی شان دار کار کردگی پر انہیں 2013میں ایم کیو ایم کی جانب سے این اے251سے قومی اسمبلی کا ٹکٹ دیا گیا اوروہ 81 ہزار 603ووٹ کے ساتھ فاتح رہے، وہ ایم کیو ایم کے فعال، ملنسار، بااخلاق اور ہر ایک کے دکھ درد میں شریک ہونے والے رہنماؤں میں شمار ہوتے تھے۔ مرحوم نے منگل کو شام سات بج کر16منٹ پر آخری بار اپنا واٹس اپ چیک کیا تھا، وہ سوشل میڈیا پر بھی خاصے متحرک رہتے تھے، دوستوں کو ہر صبح پاکستان اور اسلام سے محبت کے پیغامات بھیجا کرتے تھے۔ علی رضا عابدی ایم کیو ایم میں اختلافات کے بعد ڈاکٹر فاروق ستار کے ساتھ تھے تاہم دونوں گروپس میں اتحاد کے بعد انہیں این اے 243سے قومی اسمبلی کا ٹکٹ دیا گیا مگر وزیر اعظم عمران خان کے سامنے انہیں شکست کا سامنا کرنا پڑاتھا۔

مزید خبر یں

کراچی(نیوز ڈیسک)پاکستان پیپلز پارٹی کے سینئررہنمااور سابق قائد حزب اختلاف سید خورشیداحمد شاہ نے کہاہے کہ ایسا لگتا ہے ملک میں کوئی جمہوریت نہیں جس کو چاہو پکڑو بعد میں پوچھا جائے گا۔سیاست دانوں کو صرف جمہوریت اور حق حکمرانی مانگنے کی سزا دی جارہی ہے،راولپنڈی ... تفصیل

اسلام آباد (نیوز ڈیسک) پاکستان تحریک انصاف کے مرکزی سیکرٹری اطلاعات عمر چیمہ نے کہا ہے کہ نواز شریف کی صحت کی فکر ہوتی تو نون لیگی اس پر سیاست نہ کرتے۔ایک بیان میں عمر چیمہ نے کہاکہ نواز شریف کی بیماری کو لے کر شہباز ... تفصیل

اسلام آباد (نیوز ڈیسک) پاکستان پیپلز پارٹی کے رہنما نیر بخاری نے آئی آر آئی سروے پر رد عمل کااظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ خود ساختہ اور من پسند سروے حکمرانوں کی عوام دشمنی پر پردہ ڈالنے کی ناکام کوشش ہے۔ایک بیان میں نیر بخاری ... تفصیل