حکومت کا سینیٹ انتخابات میں ہارس ٹریڈنگ کے خاتمے کیلئے اوپن بیلٹ کا فیصلہ
جی 20 سے پاکستان کو قرضوں کی ادائیگی میں 2 ارب ڈالر سے زائد ریلیف ملنے کا امکان
سعودی عرب میں کوڑے مارنے کی سزا کو باضابطہ ختم کردیا گیا
سٹیزن پورٹل سے شہری غیر مطمئن، وزیراعظم کا اداروں کیخلاف تحقیقات کا حکم
کورونا نے پی ٹی آئی کی رکن اسمبلی شاہین رضا کی جان لے لی
ایشیائی ترقیاتی بینک نے پاکستان کو کورونا وباء سے بچاؤ کیلئے 30 کروڑ ڈالر کا قرض فراہم کر دیا
حکومت بلوچستان نے اسمارٹ لاک ڈاؤن میں 2 جون تک توسیع کردی
پاکستان میں 2 ماہ بعد ریلوے آپریشن بحال کر دیا گیا
کرونا وبا،ملک میں 1ہزار سے زائد اموات،مریضو ں کی تعداد47ہزار سے تجاوز کر گئی،13ہزار سے زائدصحتیاب
تازہ تر ین

قومی اسمبلی ،وزیر مملکت برائے داخلہ شہریار آفریدی اور رانا ثنا ءﷲ آمنے سامنے

اسلام آباد (نیوزڈیسک) وزیر مملکت برائے داخلہ شہریار آفریدی نے کہا ہے کہ یہ ثابت ہو کر رہے گا رانا ثنااللہ کے خلاف کیس حقیقت ہے ، حکومت اور وزارت ان کو اس کیس سے بھاگنے نہیں دیں گی۔ قومی اسمبلی میں اظہار خیال کرتے ہوئے شہریار آفریدی نے کہا کہ رانا صاحب! آپ نے سات ماہ حیلے بہانے بنائے، ویڈیو کی بات کی گئی، ویڈیو تو رانا مشہود اور ایان علی کے کیس میں بھی موجود تھیں، رانا صاحب! آپ تیاری کریں، 18 تاریخ کو مقدمہ ہے اور جب مقدمہ شروع ہوگا تو دودھ کا دودھ پانی کا پانی ہو جائےگا۔انہوں نے کہا کہ رانا ثنا اللہ کو احساس ہونا چاہیے کہ عدالت کا فیصلہ عدالت میں ہوگا، یہ معاملہ پارلیمنٹ اور میڈیا سے حل نہیں ہوگا، رانا صاحب قرآن ہاتھ میں اٹھاتے ہیں اس پر عمل بھی کیا کریں جبکہ ماڈل ٹاﺅن کے متاثرین بھی قرآن اٹھا کر رانا ثنااللہ سے انصاف مانگ رہے ہیں۔شہریار آفریدی نے کہاکہ آئین اور قانون کی پاسداری اولین ترجیح ہونی چاہیے، میں نے کسی بھی جگہ کوئی قسم کھائی ہو تو جو چور کی سزا وہ میری سزا، میں نے کہا جان اللہ کو دینی ہے اس پر مذاق اڑایا گیا لیکن یہ ثابت ہو کر رہے گا رانا ثنااللہ کے خلاف کیس حقیقت ہے۔’انہوں نے رانا ثنااللہ کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ ایوانوں میں کسی کو ٹارگٹ کرنے نہیں آئے لیکن حکومت اور وزارت آپ کو اس کیس سے بھاگنے نہیں دے گی۔انہوں نے کہاکہ قرآن اٹھاکر، جھوٹ کے مختلف طریقوں کی بجائے قرآن کی تعلیمات پر عمل کریں ،18 تاریخ کو ٹرائل شروع کرنے دیں ، حق ہمیشہ ابھر کر سامنے آتا ہے ،اللہ ہمیں حق کا ساتھ دینے کی توفیق عطا فرمائے۔ انہوں نے کہاکہ میری غیر موجودگی میں رانا ثناءنے بات کی میں ذاتی وضاحت پر بات کررہا ہوں ،ہمارا ایمان ظالم کے آگے ڈٹنا ہے اور ڈٹے رہیں گے ،خود ن لیگ کے ارکان مجھے نر کا بچہ کہتے ہین، نر کا بچہ وہ ہے ظالم کے آگے ڈٹ جائے ۔بعد ازاں رانا ثناءاللہ نے اسمبلی میں اظہار خیال کیا ،رانا ثناءاللہ کی تقریر کے آغاز پر حکومتی ارکان کے ماڈل ٹاﺅن، ماڈل ٹاﺅن کے نعرے لگائے گئے ،پینل آف چیئر سید فخر امام نے حکومتی ارکان کو چپ کرادیا۔رانا ثناءاللہ نے اظہار خیال کرتے ہوئے کہاکہ ماڈل ٹاﺅن کا مقدمہ اینٹی ٹیر رسٹ کورٹ لاہور میں ٹرائل ہو رہا ہے ،ماڈل ٹاﺅن کا مقدمہ عدالت میں زیر سماعت، عدالت کا فیصلہ فریقین کیلئے قابل قبول ہوگا،اگرحکومت ماڈل ٹاﺅن پر کوئی اور انکوائری کرنا چاہے تو تیار ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ رانا ثنا کے پاس فائل ہے آج قرآن پاک نہیں ہے ،اللہ نے قرآن پاک میں قسم بارے کہہ دیا ہے اگر جھوٹ بولوں تو قہر نازل ہو ،میں رب ذوالجلال کے ناموں کے نیچے حاضر ناظر جان کر کہتا ہوں کہ زندگی میں کسی ڈرگ فروش سے تعلق رکھا ہو یا کسی کی سفارش کی ہو مجھ پر قہر نازل ہو۔ انہوں نے کہاکہ جس دن مجھے اے این ایف کے لوگوں نے گرفتار کیا اور 16 گھنٹے حراست میں رکھنے کے دوران ایک بات بھی کیس سے متعلق نہیں کی۔ انہوں نے کہاکہ جب اے این ایف کے اہلکاروں کو خود پتہ نہیں تھا کہ کیوں پکڑا؟ جب کوئی تفتیش یا انکوائری نہیں ہوئی تو ٹرائل کیسا؟اس مقدمے تفتیشی نے یہ کہا ہو کہ کیس آپ پر یہ ڈال رہے ہیں ، ریمانڈ لیا ہو؟ تو میں اپنی بات واپس لے لیتا ہوں مجھ پر الزام افغانستان سے فیصل آباد اور فیصل آباد سے لاہور اور پھر دنیا بھر میں ہیروئن پھیلائی جارہی ہے ۔ انہوں نے کہاکہ اتنا بڑا ادارہ ہے میں چھ ماہ سے جیل میں ہوں، ایک بھی بندہ گرفتار کرکے مجھ سے تعلق ثابت کیا گیا؟ ،شہریار خان آفریدی بھی جانتے ہیں سب کچھ، صرف ادھر ادھر کی ہانک کر جذباتی بات کررہے ہیں،اگر وہ سمجھتے ہیں کہ وہ سچے ہیں تو پھر ان پاک ناموں کے نیچے حلف اٹھائیں،وہ قرآن پر ہاتھ کر اسی قہر کے الفاظ دہرائیں تو اللہ پاک خود فیصلہ کردے گا ۔پینل آف چیئر فخر امام نے کہاکہ راناثناءاللہ نے اپنی صفائی پیش کی اس کے بعد وزیر نے اپنی ذاتی وضاحت دی ،اس کے بعد پھر ممبر نے اس کا جواب دیا ،قواعد کے مطابق کوئی بھی زیر سماعت معاملہ ایوان میں زیر بحث نہیں لایا جاسکتا ،شہریار آفریدی کے اعتراض پر پینل آف چیئر نے جھاڑ دیا ۔ انہوں نے کہاکہ جب سپیکر بات کررہے ہوں تو پھر کسی دوسرے کو بات کی اجازت نہیں دی جاسکتی ،اس بحث کو اب یہاں ختم ہونا چاہیے اب اس کا فیصلہ عدالت نے کرنا ہے ،اس ایوان میں فیصلہ قرآن پر نہیں ہوسکتا، دونوں سائیڈ سے ارکان اپنی نشستوں پر بیٹھ جائیں ،سپیکر چیئر سے رولنگ دی جاچکی ہے،انہوں نے کہاکہ اب بات قرآن پر آگئی ہے لہذا اس معاملے کو ختم کیا جاتا ہے ۔ دور ان اجلاس خواجہ آصف ایوان میں قرآن لے آئے، رانا ثناءکو قرآن پاک دیا تو شہریار آفریدی نے رانا ثنا ءسے قرآن لے لیا ،شہریار آفریدی سے مفتی صلاح الدین ایوبی نے قرآن لے لیا۔پینل آف چیئر نے تنازعہ روکنے کے لئے اجلاس کی کارروائی10 منٹ کے لیے موخر کردی۔بعد ازاں وزیر سیفران نے ایک بار پھر قران پاک منگوالیا اس موقع پرپینل آف چیئر کی جانب سے روکنے کی کوشش کی گئی اور کہاکہ یہ روایت ایک رکن نے ڈالی تھی، شہریار آفریدی چاہتے ہیں کہ وہ قران پاک پر بات کریں۔ شہر یار آفریدی نے کہاکہ میں قران مجید کو حاضر ناظر کہہ کر کہتا ہوں کہ رانا ثناءاللہ کے خلاف نہ میں نے اور نہ وزیراعظم نے کوئی سازش کی، اگر میں ایک کوئی سازش کی ہو تو مجھ پر اللہ کا قہر نازل ہو۔ بعد ازاں قومی اسمبلی کا اجلاس بدھ کو دن 11 بجے تک ملتوی کر دیا گیا ۔

مزید خبر یں

اسلام آباد (نیوزڈیسک)وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ یورپ، امریکا اور چین کے مقابلے میں ہمیں کورونا کے ساتھ غربت کا بھی سامنا ہے، معاشی بہتری کیلئے مشکل فیصلے کیے تاہم وبا کی وجہ سے توازن نہیں رہا،ہمیں کرنٹ خسارے سمیت مالی خسارے کا سامنا ... تفصیل

اسلام آباد (نیوزڈیسک)وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ صحت کے شعبے پر توجہ نہ دینے کے باعث کورونا کی وبا ہمارے لیے بڑا چیلنج ہے، ویکسین بننے تک ہمیں کورونا کے ساتھ ہی گزارا کرنا ہوگا،کورونا وائرس کا حقیقی حل ویکسین ہی ہے، صحت کے ... تفصیل

اسلام آباد (نیوزڈیسک)تحریک انصاف کی حکومت نے سینیٹ کے انتخابات میں ہارس ٹریڈنگ کے خاتمے کے لیے وزیر اعظم کے انتخاب کی طرز پر اوپن بیلٹ کے ذریعے سینیٹ چیئرمین کے انتخابات کرانے کا فیصلہ کیا ہے۔وفاقی وزیر تعلیم شفقت محمود اور وفاقی ویزر برائے نارکوٹکس ... تفصیل